MOU Signing Ceremony of Contracts worth about Rs. 6 billion at the Chief Minister's House, Peshawar


حکومت خیبر پختونخوا کا ڈیجیٹل ٹرانسفرمیشن کی طرف اہم پیشرفت، مختلف اداروں کے ساتھ 5 اہم معاہدوں پر دستخط۔
وزیر اعلی ہاوس میں معاہدوں پر دستخط کرنے کی تقریب کا انعقاد۔ وزیر اعلی خیبر پختونخوا محمود خان تقریب کے مہمان خصوصی۔
تقریب میں اراکین صوبائی کابینہ، ممبران اسمبلی، سرکاری حکام اور شراکت دار اداروں کے نمائندوں کی شرکت 
 
صوبے میں سٹیزن فیسیلیٹیشن سنٹرز کے قیام کے لئے نادرا کے ساتھ معاہدے پر دستخط۔ پہلے مرحلے میں صوبے کے 7 ڈویژنل ہیڈکوارٹرز میں سٹیزن فسلیٹیشن سنٹر قائم کئے جائیں گے۔
 
سٹیزن فیسیلیٹیشن سنٹرز میں شہریوں کو مختلف شہری خدمات ایک ہی چھت تلے فراہم ہونگے۔ شہری مختلف نوعیت کی شہری خدمات ویب پورٹل اور موبائل ایپ کے ذریعے گھر بیٹھے بھی حاصل کر سکتے ہیں۔
 
اگلے مرحلے میں سٹیزن فسلیٹیشن سنٹرز کو اضلاع تک توسیع دی جائے گی۔ منصوبے کی کل لاگت 2.1 ارب روپے پے۔
نوجوان کو ڈیجیٹل اسکلز سکھانے کے لئے مشہور نجی تنظیم Udacity کے ساتھ معاہدے پر دستخط۔ پروگرام کے تحت صوبے کے نوجوانوں نینو ڈگری پروگرام میں تربیت فراہم کی جائے گی۔ اس مقصد کے لئے مردان میں ڈیجیٹل اکانومی اینڈ اسکلز سنٹر قائم کیا جائے گا۔
نینو ڈگری پروگرام کے تحت نوجوانوں کو ڈیجیٹل اسکلز سکھانے کا یہ پروگرام ملک میں اپنی نوعیت کا منفرد پروگرام ہے۔ اس منصوبے کے تحت 400 نوجوانوں کو نینو ڈگریاں دی جائیں گی۔
 
تقریب میں پیپر لیس گورنمنٹ پروگرام پر عملدرآمد کے لئے نجی تنظیم نیسٹول کے ساتھ معاہدے پر دستخط۔ پروگرام کے تحت سرکاری محکموں کے جملہ امور کو ڈیجیٹائز کیا جائے گا۔ یہ منصوبہ پاکستان میں اپنی نوعیت کا پہلا منصوبہ ہے۔ اس مقصد کے لئے سرکاری محکموں کے 170 امور کی نشاندہی کی گئی ہے جنہیں ڈیجیٹائز کیا جائے گا۔ پیپرلیس گورنمنٹ پروگرام تمام 32 انتظامی محکموں میں متعارف کروایا جائے گا۔
پیپر لیس گورنمنٹ پروگرام پر عملدرآمد سے سرکاری محکموں کی استعداد میں بہتری کے ساتھ ساتھ سرکاری امور میں شفافیت اور احتساب کو یقینی بنایا جائے گا۔
 
تقریب میں بطور اسپیشل ٹیکنالوجی زون ڈیجیٹل سٹی ہری پور کے قیام کے لئے این ایل سی کے ساتھ معاہدے پر دستخط۔ ڈیجیٹل سٹی ہری پور 87 کنال رقبے پر قائم کیا جائے گا۔ ڈیجیٹل سٹی بین الاقوامی آئی ٹی کمپنیوں کے ایک مرکز کے طور پر کام کرے گا۔ ڈیجیٹل سٹی کے قیام سے بلاواسطہ اور بلاواسطہ روزگار کے 20 ہزار سے زائد مواقع پیدا ہونگے۔
 
ڈیجیٹل سٹی میں نوجوانوں کو سائیبر سکیورٹی، ہائی ٹیک مینو فیکچرنگ، آرٹیفیشل انٹیلیجنس، سائبر فیزیکل سسٹم اور دیگر شعبوں تربیت فراہم کی جائے گی۔ یہ منصوبہ 1.6 ارب روپے کی لاگت سے مکمل کیا جائے گا۔
 
تقریب میں سائنس اینڈ ٹیکنالوجی میوزیم مردان کے قیام کے لئے جی ایس کے کے ساتھ معاہدے پر دستخط۔ اس میوزیم کے قیام سے نوجوانوں میں ٹیکنالوجی سے دلچسپی اور ان میں تخلیقی صلاحیتوں کو فروغ دینے میں مدد ملے گی۔ اس میوزیم کا قیام نالج بیسڈ اکانومی کی طرف ایک سنگ میل ثابت ہوگا۔ میوزیم کے قیام پر تین ارب روپے کی لاگت آئے گی۔
 
 
 
Share On: